Types of Trends and Levels - Support and Resistance Breakthrough

22۔ رجحانات اور درجات کی اقسام

0 0 Vote
Instructor

22۔ رجحانات اور درجات کی اقسام

فاریکس تربیتی پروگرام کی بائیسویں نشست

فاریکس تربیتی نشست بحوالہ مالیاتی مارکیٹس میں پھر سے خوش آمدید۔ اس نشست میں ہم رجحانات اور درجات کی تقسیم، اوپر جاتے اور نیچے جاتے رجحانات، معاونتی اور مزاحمتی رویے اور پرائس چینل مع ٹرینڈ بریک تھرو کو زیر بحث لائیں گے۔

رجحان

رجحان قیمت کی وہ سمت ہے جو وقت کے ساتھ ساتھ مارکیٹ کی نقل و حرکت کی نشان دہی کرتی ہے۔

معاونت

وہ درجہ یا ریجن کہ جس میں رجحان کی اعانت کی جاتی ہے تاکہ وہ اپنی موجودہ جگہ سے مزید آگے بڑھے۔

مزاحمت

ایک درجہ یا علاقہ جس میں رجحان اپنی موجودہ روش کے برخلاف حرکت کرتے ہوئے اپنی سمت تبدیل کر سکتا ہو۔

درجہ

درجہ کسی ایریا کی وہ عمودی لائن ہے جو کہ تکنیکی تجزیے سے برآمد کی گئی ہو جیسا کہ معاونتی و مزاحمتی درجات مثال کے طور پر کسی مزاحمتی درجے کو معاونتی درجے سے بدلا جا سکتا ہے اور اس کی وجہ یہ ہے کہ ضرورت کے باعث یہ مارکیٹ پرائس سے میل کھاتے ہیں۔ کینڈل سٹک چارٹ پر اگر رجحان تیزی کی جانب مائل ہو تو اگر کینڈل سٹک کو مکمل طور پر مزاحمتی درجے سے اوپر قائم کیا جائے تو اگلی کینڈل سٹکس کو پچھلی کینڈل سٹکسس کے اوپر قائم ہونا چاہیے۔ صرف اسی تناظر میں کوئی مزاحمت معاونتی درجے میں بدل سکتی ہے جیسا کہ اس مثال میں ہوا۔

رجحانات کی اقسام

اپ ٹرینڈز یا بلش ٹرینڈز

اپ ٹرینڈ کی سمت جسے بلش ٹرینڈ بھی کہا جاتا ہے یہ بیل کی سینگوں سے لگائی گئی ٹکر سے نکلا ہے۔ جب کوئی بیل اپنے سینگوں سے کسی پر حملہ آور ہوتا ہے تو وہ اپنا سر نیچے جھکا لیتا ہے اور پھر یک لخت سر اٹھا کر حملہ آور ہو جاتا ہے اسی کو مارکیٹ پرائس میں اپ ٹرینڈ کہتے ہیں۔

Types of Trends and Levels - Horizontal Line from Technical Analysis - Support and Resistance

بلش رجحانات میں سپورٹ لائن کو قیمتوں کی لہروں کی جڑاؤ ویلیز سے بنایا جاتا ہے اور لائن سے یہ مراد لی جاتی ہے کہ نئی ویلیز پرانی سے زیادہ بڑی ہیں یہ توقع رکھی جاتی ہے کہ رجحان موجودہ سمت میں آگے بڑھے گا۔

بلش رجحان میں مزاحمتی لائن جڑاؤ چوٹیوں سے مل کر بنتا ہے جو کہ اوپر جاتے رجحان کو غلط انداز میں متاثر کر کے اس کے زوال کا باعث بنتا ہے۔ درجات عمودی لائنیں ہوتی ہیں جو کہ چوٹیوں یا ویلیز کو اوپر جاتے یا نیچے جاتے رجحان کے حوالے سے جوڑتی ہیں۔ ایم ٹی 4 کے پلیٹ فارم کے حوالے سے بعض مثالوں کا جائزہ لینا مفید رہے۔ AUSUSD سمبل قیمتوں میں کمی کے باوجود مستقل مزاجی سے اوپر جانے کا رجحان جاری رکھے گا۔ ویلیز کو لائن کے ساتھ جوڑنے سے ایک اوپر جاتا رجحان جنم لیتا ہے کہ جس سمت میں مارکیٹ کی قیمتیں حرکت کرتی ہیں۔ قیمتیں مزاحمتی لائن کو چھوتی ہیں جو کہ رجحان کی سمت بدل دیتی ہیں کہ جب تک قیمت پھر سے مزاحمتی لائن کو چھونے لگ جائے۔ ہر بار جب مارکیٹ میں قیمتیں مزاحمتی لائن کو چھوتی ہیں تو رجحان کی سمت بدل جاتی ہے۔

آخرکار مزاحمتی لائن کو کراس کر لیا جاتا ہے اور بہت سی کینڈل سٹکس جنم لیتی ہیں اور پھر اس کے بعد یکلخت زوال کا عمل شروع ہو جاتا ہے۔ مارکیٹ کی قیمت عارضی طور پر مزاحمتی اور معاونتی لائن کے مابین ایک چینل میں حرکت کرتی ہیں جو کہ دو چوٹیوں کو ملانے سے وجود میں آتا ہے۔ اگر لیول 0.93538 پر ہو تو کہا جا سکتا ہے کہ قیمت آس پاس ہے گو کہ جب یہ چینل میں گردش کر رہی ہو قیمت میں مسلسل کمی کی رجحان کے باوجود سمبل AUDUSD کے حوالے سے اوپر کی طرف جاتا رجحان دیکھا جا سکتا ہے۔

ویلیز کو جوڑنے سے ایک معاونتی لائن کھینیچی جا سکتی ہے۔ مزاحمتی لائن چوٹیوں کو جوڑنے سے وجود میں لائی جا سکتی ہے۔ قیمت کئی دفعہ معاونتی لائن سے جا ملتی ہے جب کہ رجحان کی سمت پر مزاحمتی لائن کا نمایاں اثر رہتا ہے۔ مخصوص قیمتوں کے حوالے سے درجات طے کیےجا سکتے ہیں جب کہ رجحان بہت زیادہ اتار چڑھاؤ کا شکار ہو۔ تاجر کو اس حوالے سے لچک کا رویہ رکھنا چاہیے اور ہوشیاری کے ساتھ زیادہ اہم اور موثر معاونتی اور مزاحمتی لائنوں اور درجات کا خاکہ بنا لینا چاہیے۔لیول یا درجے قیمتوں میں ہلکوروں کو دیکھتے ہوئے طے کیے جا سکتے ہیں تاکہ تاجر موثر ترمیم کے لیے عمودی لائن کی خصوصیات کو کھولنے کے لیے اس پر دایاں کلک کر سکے۔ لیول کو موٹی لائن میں تبیدلی کیا جا سکتا ہے اگر چیک باکس میں فعال کا آپشن منتخب کیا جائے اور لیول کو بیگ گراؤنڈ کے طور پر تصور کر لیا جائے۔ لیول کا اصل مقام جاننا چاہیے کیوںکہ اس کے نتائج، خاص طور پر حالیہ زمانے پر نہ کہ پچھلے وقتوں کے حوالے سے، پرائس مارکیٹ پر پڑتے ہیں۔

Types of Trends and Levels - Price Movement toward Up, Upward - Bullish Pattern in Market Price Channel

نیچے جاتا رجحان یا بیئرش ٹرینڈ

نیچے جاتا رجحان یا بیئرش ٹرینڈ ریچھ کے اس نیچے جاتے  ہاتھ سے تعبیر کیا جاتا ہے جب وہ کوئی چیز چھینے کے لیے اسے جھکاتا ہے۔ بیئرش ٹرینڈ کے حوالے سے معاونتی یا سپورٹ لائن قیمت کی لہروں کی چوٹیوں کو باہم ملا کر بنائی جاتی ہے جن کا اثر قیمتوں کی گراوٹ پر پڑتا ہے۔ مزاحمتی یا رزسٹنس لائن کو ویلیز کو جوڑ کر کھینچا جا سکتا ہے جب کہ تاجر یہ توقع رکھ رہا ہو کہ قیمتوں میں تبدیلی کا رجحان اسے اوپر لے جائے گا۔ لیولز یا درجات قیمتوں کی لہروں سے متعلق چوٹیوں اور وادیوں سے وابستہ عمودی لائنیں ہوتی ہیں۔

رینج ٹرینڈ یا رجحان

رینج ٹرینڈ یا رجحان وہ لائن ہوتی ہے جو کہ جھولتی ہوئی مارکیٹ سے متعلق ہوتی ہے جس کی کوئی ایک مستقل سمت نہیں ہوتی یا جس کی نقل و حرکت مستقل اوپر نیچے ہوتی رہے بحوالہ USDJPY چند بئیرش رجحانات دیکھنے کو ملتے ہیں کہ جن کی نسبت تاجر معاونت اور مزاحمت کی لائنیں کھینچ سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ کئی غیر ہموار اور غیر متوازن پیٹرن فگرز موجود ہو سکتی ہیں۔

مزاحمتی اور معاونتی لائنیں اس ڈھلوانی مقام سے کھینچی جا سکتی ہیں جہاں سے قیمتیں تیزی سے کم ہوں۔ تاجر چوٹیوں پر معاونتی لیول رکھ سکتا ہے اور مزاحمتی لیولز کو ویلیز کو جوڑ کر قائم رکھ سکتا ہے۔ مزاحمتی لیول معاونتی لائن میں بدل جاتا ہے جب کینڈل سٹکس اسے پیچھے چھوڑتی ہیں۔ مختلف ڈھلوانوں اور صورتوں سے کئی نیچے جاتے رجحان سامنے آئیں گے۔

Types of Trends and Levels - Trend Direction towards Down - Bearish, Downtrend Market Price

پچھلی مثالوں کے برعکس قدرے کم سلوپ کے ساتھ ایک اور ڈاؤن فال ہو گا جس کے تجزیے کے لیے معاونتی اور مزاحمتی لائنیں کھینچنا پڑیں گی۔ معانوتی لائن قیمتوں کی لہروں کی چوٹیوں کو چھوتی ہیں اور مزاحمتی لائن ویلیز کو جوڑتی ہے۔ تاجر بعض رینج رجحانات کے حوالے سے معاونتی اور مزاحمتی لائنوں کوکھینچ سکتا ہے تاہم یہ عمودی لائنوں کی صورت میں ظاہر ہوں گے۔ اس رجحان کے حوالے سے معاونتی اور مزاحمتی لکیریں کھینچنے کے بعد تاجر یہ محسوس کر لیتا ہےکہ قیمت اس چینل میں چلی گئی ہے جس میں تیزی سے اور مسلسل اوپر نیچے حرکت نہیں ہوتی۔ قیمت فوری ڈھلوانوں کے آنے سے اوپر نیچے جا سکتی ہیں۔ مثال کے طور پر قیمت مختلف ڈھلوانوں کے ساتھ رینج رجحان میں اوپر نیچھے ہوتی ہے۔

اپ ڈیٹ

تاجر کو درجات کے محل وقوع کو ہمیشہ اپ ڈیٹ کرنا چاہیے اور زیادہ بہتر کارکردگی کے لیے چارٹس پر معاونتی اور مزاحمتی لکیریں کھینچتے رہنا چاہیے۔

چینل

متناسب حرکات برائے قیمت جو کہ معاونتی اور مزاحمتی لکیروں کے مابین ہوتی ہے، چینل کہلاتی ہے۔ مثال کے طور پر تاجر اوپر جاتے رجحان کے حوالے سے چینل دریافت کر سکتا ہے جب کہ قیمت معاونتی اور مزاحمتی لکیروں کے مابین قدرے اتار چڑھاؤ کے باوجود درمیانے انداز سے اوپر جائے۔ معاونتی لکیر کو حالیہ حرکات قیمت کے پیش نظر زیادہ بہتر انداز سے بھی کھینچا جا سکتا ہے۔ اس مثال میں معاونتی لکیر دو ویلیز کے مابین کھینچی جا سکتی ہے۔ اور مارکیٹ کی اگلی قیمت میں تبدیلی سے تاجر اگلی ویلی کو مدنظر رکھتے ہوئے معاونتی لکیر میں تبدیلی کر سکتا ہے۔ معاونتی لکیر کو کئی بار تبدیل کیا جا سکتا ہے۔

Types of Trends and Levels - Symmetrical, Bullish and Bearish Trading Patterns - Range and Volatile Financial Market Price

لیول یا معاونتی بریک تھرو

بریک تھرو کی تخصیص کرنا ایک مشکل پیدا کرنا والا معاملہ ہے۔ معاونتی اور مزاحمتی لکیریں اور درجات کو قیمت

کئی بار پار کر لیتی ہے تاہم بریکنگ کا عمل شاذ و نادر ہی وقوع پذیر ہوتا ہے۔

بیئرش رجحان میں اگر معاونتی لکیر کے اوپر کینڈل سٹک مکمل طور پر غلبہ پا لے اور ایک اور کینڈل سٹک پہلی کے اوپر قائم ہو جائے تو تو بریک کا عمل واقع ہو جاتا ہے۔ تصور کریں کہ پہلی کینڈل سٹک کو زیادہ سے زیادہ 5 کینڈل سٹکس کو پار کرنا ہو، اگر مزاحمتی لکیر کو کینڈل سٹیک مکمل طور پر پار کر لے اور اگلی کینڈل سٹک پہلی کینڈل سٹک سے نیچے رہے تو سمجھ لیں مزاحمت کا عمل ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو گیا ہے۔

بلش ٹرینڈ میں اگر کینڈل سٹک مزاحمتی لکیر سے اوپر ہو جائے اور زیادہ قیمت کی کینڈل سٹکس پیچھے آئیں

تو مزاحمتی لکیر مارکیٹ کے رجححان کے پیش نظر ٹوٹ جاتی ہے۔ معاونتی لکیر کو کسی رجحان کو پار کرنا ہوتا ہے اور کینڈل سٹک کو مکمل طور پر معاونتی لکیر کو کے نیچے وجود میں آنا پڑتا ہے اور اس کے بعد کم قدر کی کینڈل سٹکس آتی ہیں۔ معاونتی لکیر ٹوٹ جاتی ہے۔ ایم ٹی 4 پلیٹ فارم کے حوالے سے بریک تھرو کی وضاحت کرنا زیادہ فائدہ مند رہتا ہے۔ پہلی مثال میں یکم اپریل کے وقت کے دورانیے سے قبل کوئی بریک نہیں ہو گی جب کہ قیمت بلش ٹرینڈ کی معاونتی لکیر کو توڑ چکی ہو اور زوال کا عمل جاری ہو دوسری مثال ٹوٹ جانے والے درجے سے متعلق ہے۔ اگر لیول 101.28 پر کھینچا جائے تو یہ 27 مارچ کو واضح ہو گا۔

Types of Trends and Levels - Breaking Levels by Market Price - Bullish and Bearish Price Market

ایک کینڈل سٹک اس لیول پر مکمل طور پر وجود میں آئے گی اور اس کے اوپر ایک اور کینڈل سٹک حاوی ہو جائے گی۔ اس باعث قیمت اوپر کی طرف جائے گی۔ مزید یہ کہ لیول کئی بار اوپر اور نیچے کی طرف سے پار کیا جائے گا اور اس کے پیچھے سمتی کینڈلز آئیں گی۔ یہ اہم ہے کہ پہلی کینڈل سٹک دیگر کینڈل سٹکس کو پار کرے جو کہ ظاہر کرتی ہے کہ قیمت کا رجحان اسی سمت میں آگے بڑھے گا نہ کہ اس کا رخ معاونتی اور مزاحمتی لکیروں کی طرف ہو گا۔ لیول کے اوپر کینڈل سٹک قائم ہو جاتی ہے اور اس کے پیچھے ایک اور کینڈل سٹک آتی ہے یوں مارکیٹ کی سمت میں تسلسل سا برقرار رہتا ہے۔ ایک چھوٹی کینڈل سٹک لیول سے نیچے وجود میں آتی ہے تاہم اگلی کینڈل سٹک پہلی کو پار کرنے میں ناکام رہے تو سمجھیں کہ قیمت لیول کی طرف پلٹ آئی ہے۔ پس تاجر کینڈل سٹکس کے اوپر اہم مقامات پر خریداری آرڈر دھر سکتا ہے جو کہ بریک تھرو کینڈل سٹک کو پار کر چکا ہوتا ہے اور ایک دوسری مثال میں

فروختی آرڈر کسی مخصوص کینڈل سٹک کے نیچے دھرا جا سکتا ہے۔ یا کسی اوپر جاتے رجحان کی مثال کے طور پر اگر تاجر ویلیز کو جوڑنے والی معاونتی لکیریں کھینچتا ہے۔ پہلی کینڈل سٹک معاونتی لکیر کو پار کر چکی ہے تاہم پہلی کینڈل سٹک سے نیچے کوئی اور کینڈل سٹک نہیں ہے پس قیمت واپس پلٹ آتی ہے۔ تاجر کو سپورٹ لائن کو اپ ڈیٹ رکھنا چاہیے کیوں کہ مارکیٹ کی قیمت اپنی نقل و حرکت جاری رکھتی ہے۔ معاونتی لکیر کے لیے تاجر کو سب سے حالیہ ویلی کو مدنظر رکھتے ہوئے ویلیوں کو جوڑنا ہوتا ہے۔ غالباً بعض اوقات بریک تھرو ناکام ٹھہرتا ہے اور تاجر کو ہمیشہ تازہ ترین ویلیز یا چوٹیوں کی مناسبت سے لکیروں کو اپ ڈیٹ رکھنا ہوتا ہے تآنکہ کامیاب بریک تھرو ہو جائے۔

Types of Trends and Levels - Break Through Support and Resistance Level - Trading Platform MetaTrader

اس کے ساتھ ہی یہ نشست اختتام پذیر ہوتی ہے۔ اگلی نشست میں پھر ملیں گے، اپنا خیال رکھیے گا۔

Comments

Copyright © 2011-2020 PFOREX.COM | Professional Forex School | Cashback and Rebates