Risk Management and Money Management - Forex Market

54۔ تجارت میں رسک منیجمنٹ اور منی منیجمنٹ

0 0 Vote
Instructor

54۔ تجارت میں رسک منیجمنٹ اور منی منیجمنٹ

فاریکس تربیتی پروگرام کی چونویں نشست

فاریکس تربیتی نشست بحوالہ مالیاتی مارکیٹس میں پھر سے خوش آمدید۔ اس نشست میں ہم تجارتی طریقہ کار کے ساتھ ساتھ رسک اور کیپیٹل منیجمنٹ کے معاملات زیر بحث لائیں گے۔

تجارتی طریقہ کار

اول تو یہ ہے کہ تاجر کو تکنیکی و اساسی طریقہ ہائے کار کو سمجھنا ہو گا تاکہ وہ مارکیٹ پرائس کی سمت اور رجحان کو شناخت کر سکے۔ بعد ازاں کئی سال کی مسلسل مشق بھی ضروری ہے تاکہ تاجر کامیابی کےساتھ تجارت کی اہلیت پیدا کر لے۔ مشق کا دورانہ ہر ایک فرد کے لیے مختلف ہو گا اور اس کا انحصار ان کے علمی پس منظر اور مزید جان کاری کے جذبے سے ہو گا۔ تاجروں کو ہمہ وقت مشق اور مطالعہ جاری رکھنا ضروری ہوتا ہے جس طرح ایک ایتھلیٹ کے لیے ضروری ہوتا ہے کہ وہ اپنی روزمرہ مشق کو ترک نہ کرے تاکہ وہ اپنی پیشہ وارانہ مہارت کی بلندیوں کو چھونے لگے۔

جب ایک تاجر کافی تجربہ اور علم حاصل کر لیتا ہے تو وہ پرائس ایکشن طریقہ کار کی مدد سے خریداری اور فروختی انٹری پرائس کو جان لیتا ہے۔ تاجر کو اس بات کو مدنظر رکھنا ہوتا ہے کہ بعض ریجن ایسے ہوتے ہیں کہ جن کے حوالے سے کوئی آرڈر رکھوانا ممکن نہیں ہوتا۔ اس لیے یہ بہتر ہوتا ہے کہ مارکیٹ کے رجحان کو دیکھا جائے اور مناسب پوائنٹس کا انتظار کیا جائے تاکہ حکمت عملیوں اور پیٹرنز یا نمونہ جات کو شناخت کیا جا سکے۔ جیسا کہ پرائس ایکشن ایلیٹ ویوز اینڈریوز پچ فورک اور ہارمونک پیٹرنز۔

Risk Management and Money Management - Fundamental and Technical Forex Market Analysis

تاجر کو حکمت عملیوں اور سمجھنا اور استعمال کرنا چاہیے جو کہ ہر تاجر کے لیے انفرادی طور پر شخصیائی جا سکتی ہیں۔ اسے ہم اپنی اگلی نشست "حکمت عملیوں کی تخلیق اور ان کی کسٹمائزیشن" میں تفصیل سے زیر بحث لائیں گے۔

بالآخر تاجر کو بالکل صحیح فروختی اور خریداری اینٹری ٹی پی اور ایس ایل پرائسز یا قیمتوں کا تعین کرنا پڑ سکتا ہے۔ تاجراپنی تجارتی مہارتوں کوبہتر بنانے کے لیے منظرنامے کی بنیاد پر منصوبہ بندی کو استعمال کر سکتا ہے۔ آرڈرز کے نمبر اور پپس کی رقم کی بنیاد پر تاجر کو اپنے آرڈرز کے حوالے سے رسک اینڈ کیپیٹل منیجمنٹ سے استفادہ کرنا پڑتا ہے۔

مختلف النوع حکمت عملیوں پیٹرن اور تجزیوں کے ذریعے کئی قسم کی تصدیقات کے بعدد تاجر مناسب آرڈر رکھوا سکتا ہے۔

منی منیجمنٹ

تاجر کو منی منیجمنٹ حکمت عملیوں کو مدنظر رکھنا پڑتا ہے تاکہ بہترین تجارتی طریقہ کار اور زائد پیداوار حاصل کر سکے۔ مختلف تاجروں کے لیے حقیقی اکاؤنٹ میں جمع شدہ رقم کے حوالے سے منی منیجمنٹ کی درج ذیل صورتیں ہو سکتی ہیں۔

الف۔ نوآموز تاجروں کو ایک سال کی مدت کے لیے 500$-50$ مالیت کے اکاؤنٹس کھلوانے چاہئیں

Risk Management and Money Management - Stop Loss and Take Profit Prices - Customize Trading Strategies

ب۔ درمیانے درجے کے خودمختار تاجر کہ جو ابھی تک اس درجہ تجارتی اہلیت نہیں پا سکے کہ غلطیوں سے بچ سکیں جیسا کہ ٹی پی یا ایس ایل قیمتوں کے حوالے سے نادرست حجم۔ ایسے تاجروں کو 3 سال کی مدت کے لیے اپنے فاضل بجٹ سرمائے سے 3٪ سے کم حصہ جمع کروانا پڑتا ہے۔

ج۔ پیشہ ور تاجر جن کے پاس بہت زیادہ تجربہ اور علم ہوتا ہے وہ اپنے فاضل بجٹ سرمائے کا 10٪ سے کم حصہ جمع کروا سکتے ہیں۔ تاہم جامع علم عقلی نوعیت کی پیشگوئیوں اور تجزیے بھی کامیاب تجارت اور منافع کی ضمانت نہیں دیتے ہیں۔

آرڈرز اور تجارتی سودے بازیوں کے حوالے سے منی منیجمنٹ کچھ اس طرح سے ہوتی ہے،

الف۔ تجارتی طریقہ کار اور رویے کی بنیاد پر، طویل درمیانہ اور قلیل المدت۔ تاجر حقیقی تجارتی اکاؤنٹ کھول سکتے ہیں۔ مثال کے طور پر اگر کوئی تاجر انٹری پرائس سے 20 پپس کے فاصلے پر ٹی پی پرائس کے ساتھ قلیل المدت آرڈر رکھوانے کا خواہش مند ہو اور اس کے ساتھ ساتھ اسی سمبل کے حوالے سےدرمیانے اور طویل المدت آرڈرزہوتے ہیں جس میں بالترتیب 50 پپس اور 500 پپس ہوتے ہیں۔ قلیل المدت آرڈرز منٹوں یا گھنٹوں میں بند ہو سکتے ہیں جب کہ درمیانی مدت کے آرڈرز کچھ دن لیتے ہیں اور طویل المدت آرڈرز کچھ ماہ تک لے لیتے ہیں۔ اس بات کی پرزور سفارش کی جاتی ہے کہ تاجر اپنی شرائط کی بنیاد پر مختلف اکاؤنٹس میں الگ سے آرڈرز رکھوائے۔ یہ طریقہ اس لیے اختیار کیا جاتا ہے کہ تاجر پر سے فیصلہ کرنے کے حوالے سے دباؤ کو گھٹایا جا سکے۔

Risk Management and Money Management - Trading Knowledge and Experience - High Yield and Profit

ب۔ تاجر ہر اکاؤنٹ میں سے مخصوص مقدار میں فنڈز دوسرے اکاؤنٹ میں منتقل کر سکتا ہے۔ مثال کے طور پر اگر درمیانی مدت کے اکاؤنٹ میں سے منافع کشید کرتا ہے اور قلیل المدت اکاؤنٹ کے حوالے سے کافی تصدیقات بحوالہ مناسب پوزیشن کی شناخت عمل میں آتی ہے تو تاجر درمیانی مدت کے اکاؤنٹ میں سے مخصوص مقدار میں فنڈزکی رقم قلیل المدت اکاؤنٹ میں منتقل کر سکتا ہے۔

ج۔ تاجر کو کبھی بھی کسی واحد اکاؤنٹ یا کسی ایک آرڈر میں اپنے تمام فنڈز کو منتقل نہیں کرنا چاہیے۔ کوئی بھی اس بات کی ضمانت نہیں دے سکتا کہ کوئی آرڈر 100٪ کامیاب ہو گا۔ کوئی بھی خبر یا واقعہ جیسا کہ جنگ سیلاب یا کوئی زلزلہ رجحان کی سمت بدل سکتا ہے جس میں تاجر نے کئی طاقت ور تصدیقات کے ساتھ آرڈر رکھوایا ہوتا ہے۔

Risk Management and Money Management - Short, Medium and Long Term Trading Method

د۔ تاجر کو درج ذیل زاویوں کو مدنظر رکھتے ہوئے ہر آرڈر کے حجم کو جانچنا ضروری ہے۔ ریوارڈ کا راشن اوپر خسارے کی بنیاد 1 پپ پرائس شفٹ پر ہے مثال کے طور پر ای یو آر یو ایس ڈی کا نفع یا نقصان ہر پپ میں 10$ ہے۔ پپس کی تعاد جو کہ ٹی پی اور ایس ایل پوائنٹس انٹری پرائس سے فاصلے پر ہے۔ رسک منیجمنٹ طریقہ کار کے ذریعے رسک کی شرح فیصد کی وضاحت کسی مخصوص پرائس کے گرد آرڈرز کی تعداد۔ فنڈز کو نکلوانے کے لیے منی منیجمنٹ ایک اہم معاملہ ہے جس کو تاجر کبھی بھی ایکسپلور نہیں کرتے۔ کسی اکاؤنٹ میں اگر زیادہ فنڈز رکھوائے جائیں تو سرمائے کے کھونے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ مثال کے طور پر تاجر تجارت سے کافی بڑی تعداد میں منافع کما سکتے تھے۔ بعض تصدیقات کے بعد ایک تاجر نے آرڈر رکھوایا جس میں حجم کو غیر معقول انداز میں زیادہ رکھا گیا ہے۔ اکاؤنٹ میں کافی بڑی مقدار میں رقم کی موجودگی کے باعث کسی حد تک اتار چڑھاؤ کے بعد قیمت ایس ایل پوائنٹ کو چھو گئی اور تاجر تمام فنڈز سے محروم ہو گئے۔ اگر منافع کشید کرنے کے بعد تاجر مخصوص مقدار میں فنڈز واپس لے لیتے تو ان کا سرمایہ محفوظ رہ سکتا تھا۔ تاجر کو تجارتی طریقہ کار کی بنیاد پر اپنے فنڈز کے حوالے سے ایک خاص حد کو پیش نظر رکھنا چاہیے۔ تاجر کو طے شدہ حد سے زائد رقم کی مقدار کو واپس لے لینا چاہیے۔ اگر کوئی تاجر 100$ اکاؤنٹ میں سے 900$ منافع کما سکتا ہے تو اس کا یہ مطلب نہیں ہوتا کہ وہ 1000$ اکاؤنٹ سے 9000$ کما سکتا ہے۔ ایک 100$ کے اکاؤنٹ کی شرائط 1000$ اکاؤنٹ کی شرائط سے مختلف ہوتی ہیں۔ چونکہ 100$ نظرانداز کردہ رقم ہوتی ہے جب کہ 1000$ اتنی رقم نہیں ہوتی ہے کہ جسے لوگ نظرانداز کر سکیں۔ جتنی بڑی رقم کی تعداد ہو گی تاجروں پر اتنا ہی دباؤ آئے گا۔

رسک منیجمنٹ

اہم ترین معاملہ کہ تاجر جس کو مدنظر رکھتے ہیں، وہ یہ ہے کہ جب وہ آرڈر رکھواتے ہیں تو ان کو رسک منیجمنٹ کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ جس طرح ایکسلریٹر پیڈل کی مثال کار کے حوالے سے دی جا سکتی ہے اگر تاجر رسک منیجمنٹ کا غلط استعمال کرتا ہے تو اس کے اکاؤنت میں موجود تمام سرمایہ ضائع ہو جائے گا۔

بہتر رسک منیجمنٹ طریقے کے ذریعے تاجر اطلاقی حکمت عملیوں کی بنیاد پر سرمائے کے ایک حصے کو خطرے میں ڈال سکتے ہیں اور کسی خاص پوائنٹ پر سگنلز اور کنفرمیشن کی طاقت کو جانچ سکتے ہیں۔ مثلاً کوئی بھی یکساں رفتار سے ہر حالت میں کار نہیں چلا سکتا۔ کسی تنگ گلی میں کار کی رفتار 8 میل/ گھنٹہ کی رفتار سے کم رکھنا پڑتی ہے جب کہ کسی ہائے پر یہ رفتار 70 میل/گھنٹہ کی زائد رفتار تک جا سکتی ہے۔

Risk Management and Money Management - Deposit Money for Trading in Forex Market

مثلاً تاجر کی حکمت عملی کی 4 صورتیں ہیں جس میں سے کنفرمیشنز اور سگنلز کی بنیاد پر کامیابی کے مختلف امکانات ہوا کرتے ہیں۔

1۔ 65٪

2۔ 72٪

3۔ 77٪

4۔ 85٪

پس جب تاجر کے آرڈر کی کامیابی قریب قریب 65٪ ہو تو وہ اکاؤنٹ سرمائے کا 2٪ خطرے میں ڈال سکتا ہے۔ اگر دوسری حکمت عملی کا تعین کیا جائے تو وہ سرمائے کو 3٪ خطرے میں ڈال سکتا ہے جب کہ تیسری اور چوتھی حالت میں تاجر بالترتیب 4٪ اور 8٪ کو خطرے میں ڈال سکتا ہے۔

پس تجارت کی حالت کی بنیاد پر تاجر اکاؤنٹ سرمائے کا ایک حصہ منتخب کر سکتا ہے تاکہ مناسب رسک منیجمنٹ کو ڈیویلپ کرے۔ تاجر مزید سٹریٹیجی کنڈیشنز یا حالات کا تعین کر سکتا ہے تاکہ مزید آرڈرز رکھوا سکے۔ ایک تاجر کے پاس زائد وقت اور فوکس ہوتا ہے تاکہ وہ مفید پوائنٹس اور رجحانات کو شناخت کر سکے۔

وہ تاجر جو مزید حکمت عملیاں اپناتے ہیں اور بہتر حالات کا انتظار کرتے ہیں وہ اس کنڈیشن میں ایک آرڈر رکھواتے ہیں جو کہ کامیابی کے زیادہ امکانات کی نمائندگی کرتی ہے پس خسارے کے امکانات نمایاں حد تک کم ہو جاتے ہیں۔ کم تجارت کے باوجود یہ تاجر اپنے آرڈرز سے زیادہ منافع حاصل کر سکتے ہیں۔

ایک اور اہم ترین بات جو کہ ایک تاجر کر سکتا ہے وہ یہ ہے کہ تاجر مارکیٹ کے متعلق آگہی رکھے اور رسک منیجمنٹ کا خیال رکھے جب تک وہ اس میدان میں رہے۔ رسک منیجمنٹ کا غلط استعمال تاجر کو اپنی تمام رقم سے محروم کرنے کا باعث بن سکتا ہے۔

رسک منیجمنٹ یا تجارت میں سرمایہ کاری کا استعمال حکمت عملیوں اور تصدیقی عناصر استعمال کر کے کیا جا سکتا ہے۔ مثلاً یہ ناممکن ہے کہ کوئی فرد 100 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے ہمہ وقت گاڑی چلائے۔ اور وہ بھی ایک مسلسل ایک گلی میں ایسا ممکن ہے کہ آپ 5 کلومیٹر فی گھنٹی کی رفتار سے گاڑی چلا لیں اور کسی اور گلی میں آپ 20 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے گاڑی چلا پائیں یا موٹر وے پر آپ 100 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے گاڑی چلا لیں۔ پس آپ جس رفتار کا انتخاب کرتے ہیں وہ آپ کے رسک منیجمنٹ اور اس بات کی بنیاد پر ہوتی ہے کہ آپ سڑک اور وقت کے علاوہ رفتار سے آگاہ ہوں۔ ایسی ہی مثالیں آپ کو مالیاتی مارکیٹ میں مل سکتی ہیں۔ مثال کے طور پر آپ کی حکمت عملی چار امکانات کے ساتھ ہوتی ہے اور ہر ایک میں آپ کے منافع کی شرح مختلف ہوتی ہے۔ پہلی حکمت عملی میں آپ کا منافع 65٪ ہوتا ہے اور دوسری حکمت عملی میں بہتر کنفورمیشن کے ساتھ 72٪ ہوتا ہے اور تیسری میں مزید بہتر کنفورمیشن کے ساتھ 77٪ ہو سکتا ہے اور چوتھی میں اس سے زیادہ کنفورمیشن کے ساتھ 85٪ ہو سکتا ہے۔ ہس کنفورمیشنز کی تعداد کی بنیاد پر کسی تجارت کے حوالے سے رسک کو تجارت کی نسبت سے شمار کیا جا سکتا ہے۔

Risk Management and Money Management - Strategy, Plan and Analyst - Definition and Models

ذیل میں رسک منیجمنٹ بریک ڈاؤن اوپر کی مثال کے حوالے سے دکھایا گیا ہے۔ اگر 65٪ منافع ہو تو صرف رسک 2٪ ہوتا ہے جب کہ اگر یہ 72٪ ہو تو رسک 3.5٪ ہوتا ہے۔ جب یہ 77٪ ہو تو رسک 4٪ ہوتا ہے اور آخرکار اگر یہ 85٪ ہو تو رسک 8٪ ہوتا ہے۔

Risk Management and Money Management - Confirmations of Trading Pattern, Indicators and Oscillators

اس بات کی سفارش کی جاتی ہے کہ 2 تا 5 حکمت عملیوں کو استعمال کیا جائے اگر آپ مزید تجارت کرنا چاہتے ہیں۔ یہ آپ کی مدد کرتی ہے کہ آپ کے پاس وقت کی بہتر تحدید ہو تاکہ آپ تجارت کر پائیں۔ اور خاص مواقع پر آپ کے پاس بہتر آپشن ہو کہ جب مارکیٹ میں استحکام ہو تو آپ کو تجارت کرنے کی کھلی آزادی ہو مثلاً 2 تا 5 مختلف حکمت عملیوں کے باعث آپ کو بہتر تناظر فراہم ہو جاتا ہے۔ پس آپ مزید ایسی تجارتی سودے بازیاں نہیں کرتے جیسا کہ 65٪ یا 72٪ اور آپ 77٪ یا 85٪ کے حساب سے تجارتی سودے بازی کرتے ہیں۔ یاد رکھیں خطرے سے بچاؤ کے بہتر انتظام کے لیے آپ کو زیادہ حکمت عملیاں اپنانا پڑتی ہیں اور زیادہ صبر سے کام لینا پڑتا ہے۔ وہ پارٹیاں جو اس اصول کی بنیاد پر اپنی تجارتی سودے بازیاں کرتی ہیں ان کو مارکیٹ میں بہتر نتائج حاصل ہوتے ہیں۔

اس کے ساتھ ہی یہ نشست اختتام کو پہنچی۔ اگلی نشست کے ساتھ پھر حاضر ہوں گے، اپنا خیال رکھیے گا۔

Comments

Copyright © 2011-2020 PFOREX.COM | Professional Forex School | Cashback and Rebates